> <

ثقلین مشتاق نے سب سے کم عمر، سب سے کم وقت اور سب سے کم میچوں میں 100 وکٹیں حاصل کرنے کاعالمی ریکارڈ قائم کیا

ثقلین مشتاق ٭1996-97ء کا سال پاکستان کے نوجوان اسپنر ثقلین مشتاق کے لئے ہر لحاظ سے ایک یادگار سال تھا۔ اس برس انہوں نے ایسے کئی سنگ ہائے میل عبور کئے جو انہیں کرکٹ کی تاریخ میں ہمیشہ زندہ رکھیں گے۔ ثقلین مشتاق نے اپنے ٹیسٹ کیریئر کا آغاز 8 ستمبر 1995ء کو اور ایک روزہ بین الاقوامی کیریئر کا آغاز 29 ستمبر 1995ء کو کیا تھا۔یہ دونوں میچ انہوں نے سری لنکا کے خلاف کھیلے تھے۔ 1996ء میں ثقلین مشتاق نے 32 ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں 65 وکٹیں حاصل کرکے ایک کیلنڈر ایر میں سب سے زیادہ وکٹیں لینے کا نیا عالمی ریکارڈ قائم کیا۔ثقلین مشتاق کی ان 65 وکٹوں میں ایک ہیٹ ٹرک بھی شامل تھی جو انہوں نے 3 نومبر 1996ء کو پشاور میں زمبابوے کے گرانٹ فلاور، جان رینی اور اینڈریو وٹل کو آئوٹ کرکے حاصل کی۔ ثقلین مشتاق دنیا کے پہلے اسپنر تھے جنہوں نے ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں ہیٹ ٹرک بنانے کا اعزاز حاصل کیا تھا۔ ثقلین مشتاق کے نئے ریکارڈز کا سلسلہ 1997ء میں بھی جاری رہا۔ 12 مئی 1997ء کو جب انہوں نے آزادی کپ ٹورنامنٹ میں گوالیار کے کیپٹن روپ سنگھ اسٹیڈیم میں سری لنکا کے کمارا دھرم سینا کو آئوٹ کیا تو وہ دنیا میں سب سے کم عمر، سب سے کم وقت اور سب سے کم میچوں میں 100 وکٹیں حاصل کرنے والے کھلاڑی بن گئے۔ ثقلین مشتاق نے یہ اعزاز 20 سال 166 دن کی عمر، ایک سال 226 دن کی مدت اور 53 میچ کھیل کر حاصل کیا۔ اس سے قبل سب سے کم میچوں میں سو وکٹیں مکمل کرنے کا اعزاز آسٹریلیا کے ڈینس للی کے پاس تھا جنہوں نے یہ سو وکٹیں 63 میچوں میں حاصل کی تھیں۔

UP